جانیں 5 ایسے حقائق کے بارے میں جو کسی بھیانک خواب سے کم نہیں

Wednesday 21st of April 2021

جانیں 5 ایسے حقائق کے بارے میں جو کسی بھیانک خواب سے کم نہیں

زندگی عجیب و غریب تجربات سے بھرپور ہے یہاں تک کہ کچھ تجربات ہمارے لئے کسی بھیانک خواب سے کم نہیں ہوتے۔ اس آرٹیکل میں ہم آپ کو کچھ ایسے حقائق کے بارے میں بتائیں گے جو کسی بھی ڈراؤنے خواب سے کم نہیں۔

1- مردہ انسانوں کی بتیسی

urdu article

اٹھارویں صدی میں جب دانتوں کے ڈاکٹروں کو مریضوں کے لئے نئی بتیسی کی ضرورت پڑی تو انھوں نے مردہ لوگوں کی بتیسی نکال کر استعمال کی۔ چونکہ اس دور میں آج کی طرح جدید آلات اور سہولیات میسر نہیں تھیں تو بتیسی تبدیل کرنے کے لئے مردہ لوگوں کے دانت استعمال کیے جاتے تھے جن میں اکثریت مردہ فوجی یا پھانسی دیے ہوئے مجرموں کی ہوتی تھی۔

2- جاگ رہے ہیں لیکن بول نہیں سکتے

urdu article

کبھی کبھی ایسا ہوتا ہے کہ ہم جاگ رہے ہوتے ہیں لیکن جسم کو حرکت نہیں دے پاتے۔ اس کیفیت کو "لاک ان سینڈروم" کہا جاتا ہے۔ لاک ان سینڈروم میں اکثر لوگوں کو مختلف تجربات سے گزرنا پڑتا ہے جیسے کسی کو ڈھول بجنے کی آواز سنائی دیتی ہے کسی کو غیر مرئی مخلوق نظر آتی ہے- البتہ ان چیزوں کا تعلق خوف سے ہوتا ہے اور یہ حقیقی طور پر موجود نہیں ہوتیں۔ لاک ان سینڈروم میں سانس لینے اور بولنے میں مطابقت نہیں رہتی اس لئے یہ کیفیت ڈراؤنے خواب جیسی ہوتی ہے۔

3- انسانی دماغ کا بھید

urdu article

جب ہم ڈراؤنی فلموں میں سر کٹتا دیکھتے ہیں تو کتنا خوف محسوس ہوتا ہے لیکن اس سے بھی زیادہ خوفناک بات یہ ہے کہ سر کٹنے کے بیس سیکنڈ بعد تک انسانی دماغ زندہ رہتا ہے۔ ایسا اس لئے ہوتا ہے کیونکہ سر کٹنے سے پہلے دماغ میں اگلے بیس سیکنڈ کے لئے آکسیجن مل چکی ہوتی ہے۔

4- شششش... مردہ آپ کی بات سن رہا ہے

urdu article

سننے کی صلاحیت انسان کے مرنے کے بہت بعد میں ختم ہوتی ہے۔ اس لیے اگلی بار آپ کسی میت میں جائیں تو اس کے آگے سوچ سمجھ کر بولیں کیوں کہ ہوسکتا ہے وہ آپ کی تمام باتیں سن رہا ہو-

5- لیفٹ ہینڈڈ جلدی مرتے ہیں

urdu article

بائیں ہاتھ سے اپنے تمام کام سرانجام دینے والے افراد دائیں ہاتھ والوں کے مقابلے میں 3 سال پہلے ہی وفات پا جاتے ہیں-

Source webpage

Source link

Latest Posts

Comments
You must be logged in to post a comment.

Random Post